#نظم#مُثمن#ایک دلچسپ حادثہ

گاڑی نکالی زوجہ سے کہا  چلوامی کے گھر جانا ہے

مجھے کیا پتا تھا کہ ایک ایکسیڈنٹ کا کوئی بہانہ ہے

ایک  موٹر سائیکل سوار  نے  ا ُڑکر  سامنے آنا  ہے

اور پھر شدت  سے آ کر میری کار  سے بِھڑ جانا ہے

پھر جو ہوناتھا وہی جس کا ڈر تھا وہ  ہو ہی جانا ہے

مقدر کا  لکھا تھا تو  پھر سامنے میرے آ ہی جانا ہے

بائک سے دور وہ زخموں سے چور چور ہکا بکا کھڑا تھا

وہاں سے نکل نہیں  سکتا  تھا  میں سامنے رکشا کھڑا تھا

کچھ  منچلے ، دل  جلے ، میری  جانب  آلئے

دیکھا  جو ساتھ  میں  لیڈیز تو سائیڈ  ہو لئے

ایک  بزرگ  نے  ہولے سے  کہا  ذرا  سنئے

کھڑا ہے بے آسرا  یہ سڑک  پر کچھ  کیجئے

میں نے بھی آسرا دیکھ  کر کہا ضرور چلئے

کہیں قریب ہے کوئی کلینک تو مجھے بتائیے

موصوف کو بائک کی فکر نہیں  تھی مگر زخموں کا ڈر پڑا تھا

میں بھی بڑی فکر میں تھا!کیونکہ مجمع بھی برابر بڑھ رہا تھا

اس  کے سِوا کوئی  چارا نہ تھا  کہ ان  کو ہسپتال لے  جاتے

معائنہ  کرواتے ، پٹی بندھواتے اور  دو  چار ٹیکے  لگواتے

اس آپا دھاپی  میں  یہ  ہوش  نہ رہا  کہ  گھر اطلاع  کرواتے

اور اس بے چارے کے گھر سے بھی  کسی  بڑے کو بلواتے

گاڑی بھی یہ کہہ رہی تھی کہ بہتر تھا کسی مکینک کوبلواتے

زوجہ بولیں کچھ پریشانی میں ، کہ بہتر تھا معاملہ جلد نبٹاتے

اس چکر میں بے کا ر دیر پر دیر ہو رہی تھی

گتّھی ہے  کے سلجھ  کے نہیں  دے رہی تھی

اسی اثناء میں ایک  صاحب یہ  بولے تم  اپنے  گھر  خبر دو

ایک صاحب نے کہا  کہ  ظالموں  اس بچے کی  بھی  خبر لو

کچھ لوگوں نے کہا منہ کیا دیکھتے ہوگلاس پانی کا بھرکردو

اس  بے چارے  کو پلاؤ  ٹھنڈا پانی اور اُنہیں بھی  جا کر دو

حالت  بری تھی ، بیگم نے کہا  کے منہ سے پسینہ پونچھ لو

جو ہونا ہے ہوکر رہے گا  اپنی  قسمت میں  جو ہے دیکھ لو

گھر سے تو نکلے تھے شوق سے والدہ کے گھر جانےکیلئے

مگر تیار کھڑے  تھے  کسی اور کو ہسپتال  لے  جانے  کیلئے

عجب خدا پاک کی کرنی کے پھر ایسا ہوا

آگیا تھا وہاں اس کا بڑا کچھ یوں گویا ہوا

یہ تو کرنی ہے قسمت کی اس میں کیا ہوا

لوگوں  نے  ہے آپ  کو کیوں  گھیرا  ہوا

بچہ تو میرا تھا کار سے آپ  کی بھڑا ہوا

مہر ہے  رب  کا  کہ  ہے اب  تک  بچا ہوا

مہر اس کا دیکھ کر آنکھ میں میری آنسو آگئے

کچھ  کہہ نہ سکا  میں ، ہونٹ میرے  تھرّا گئے

اسی  حالت  میں  ہم  دونوں  میاں  بیوی  گھر  آگئے

امی کا فون آیا اتنی  دیر کردی  تم نے کہاں  رہ  گئے

میں کس کے ساتھ  جاؤں  اب  بچے تو سب سو گئے

امی کو ساری بات  بتائی،حادثے میں تھے پھنس گئے

خیرکر دی اللہ تعالیٰ نے اور واپس گھر ہیں  لوٹ گئے

کل دیکھیں  گے آپ  کو لے  چلیں  گے اگر  کل  گئے

اس طرح  سکندرؔ  کے ساتھ  رونما ہوا یہ دلچسپ  حادثہ

کچھ لئے دئے بنا جان چھوٹ گئی زندگی کا تھا پہلا واقعہ

سکندرؔ

2 thoughts on “#نظم#مُثمن#ایک دلچسپ حادثہ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s