غزل # دل کی حالت یہ ہے کہ سنبھلتا نہیں

دل  کی حالت  یہ  ہے  کہ سنبھلتا  نہیں

موسم  ہے بہار کا پھر بھی مچلتا نہیں

غرور  نے سبھی  رشتوں  کو بھلا دیا

اس دورمیں کوئی کسی سے ملتا نہیں

شور  ہے  نالہ   دل  میں  برپا   میرے

دریا  ہے  چڑھا غم  کا  کہ  اُترتا  نہیں

کوئی راہ سجھائی نہیں دیتی ہجر میں

امید کا چراغ ہے کہ  دل میں جلتا نہیں

ستم  کرتا   ہے  زمانہ  دل  والوں  پر

زمانے  میں  کوئی  دل  کی سنتا نہیں

آیا  نہ   مزاجِ   دہر  اعتدال  پر  کبھی

افسوں ! اس  بے رحم  پر  چلتا  نہیں

پری رُخ کو دیکھو کیسا  بے خبر ہے

جلتا  ہے  پروانہ ! ظالم  کو  خبر نہیں

ہم   ہیں  کہ  ہلاک   ہوئے  جاتے  ہیں

مزاج  ہے اس  کا  دیکھو کہ ملتا نہیں

مجنوں  نے عشق میں کیا نہیں کر ڈالا

چاہت کا صلہ  ہے کہ دنیا میں ملتا نہیں

سکندر ؔ اپنی چاہت کا اظہارکیسے کرے

دل کو حوصلہ ان کے درسے ملتا نہیں

سکندرؔ

Advertisements

One thought on “غزل # دل کی حالت یہ ہے کہ سنبھلتا نہیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s