غزل # نعتِ رسولِ مقبول ﷺ

آقا ؐ دنیا میں  کیا تشریف لائے ! عربو ں کی تقدیر سنور گئی

ظلم کی چکی میں جو پِس رہے تھے، حالت ان کی سنور گئی

اہلِ  کتاب  سب  اپنی  تعلیمات  بھلا  چکے  تھے

قرآن  کے  آنے سے  حالت  ان  کی  سدھر گئی

آقا ﷺنے قیامت تک کیلئے درسِ انسانیت دیا

فکرِ امت  میں  آپ  ﷺ کی  زندگی  گزر  گئی

عصبیت تھی چہار سو، تھے نام ونسب جہاں میں

آقا ﷺ کی سیرت سے نفرت  کی  جڑ کٹ  گئی

نور ہی نورتھا ہرسمت پھیلا ہواذرہ ذرہ تھا چمکا ہوا

جس طرف بھی کسی نے دیکھا نظر وہیں ٹھہر گئی

بعثت  سے پہلے آقا ﷺ نے چالیس برس  گزارے

زندگی میرے آقا ﷺکی اس دور میں مثال بن گئی

جو رسالت  ؐکےدشمن تھے تبلیغ میں وہی حائل تھے

دامانِ  رحمت ؐ میں آنے سے ، قسمت ان کی کھل گئی

سورج چاند زمین وآسمان بھی کرتے ہیں جن کی مدح

ہم خوش نصیب ہیں  کہ  یہ سعادت  ہمیں بھی  مل گئی

رب اور فرشتے مل کر جن کی ہر دم کرتے ہیں  ثناء

دینا والو دیکھ لو!عرش پر بھی محفلِ میلاد سج گئی

جس امتی نے بھی پڑھا نبی ءِ رحمت پر درود و سلام

ہے اللہ  تعالیٰ کا وعدہ ! اس پر تو جنت “وا” ہو گئی

تو خوش نصیب ہے سکندرؔ جو کرے ہےآقا کی ثنا ء خوانی

قسمت والے ہوتے  ہیں جن کو آقا کے در کی گدائی مل گئی

سکندرؔ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s