طرز تحریر کی خصوصیات# سر سید احمد خان

سرسید احمد خان

(۱) ابتدائیہ:

میں سر جیمس لائل رقم طراز ہیں: Bratanica انسائیکلوپیڈیا براٹانیکا

“سرسید کی نثر اردو خیال کی اشاعت کا آلہ ہے جس میں انہوں نے اس وقت کام لیا جب نثر اردو کا حقیقی وجود نہ تھا اور اس کو اس طرح بنایا اور برتا کہ اس کی نظیر ملنا مشکل ہے”۔

سرسید کی اردو کے لئے کاوشوں کو جیمس لائل نے جن الفاظ میں خراج تحسین پیش کیا یقینا ً وہ اس کے مستحق ہیں اور اردو ادب کی تاریخ میں یہ بات اظہر من الشمس ہے کہ سرسید کے اثرات پورے ادبی ماحول و فضا پر چھائے ہوئے ہیں۔موضوع، مواد اور ہیبت کے اعتبار سے وہ اپنے زمانے کے “امام” ہیں۔ سرسید کا کمال یہ ہے کہ انہوں نے اردو زبان کو ایک نیا اسلوب عطا کیا ۔ یہ ان ہی کی کاوشوں کا نتیجہ تھا کہ ایک صدی کے قلیل عرصے میں اردو ادب کہیں کا کہیں پہنچ گیا۔

بقول مولوی عبدالحق!

’’سرسید نے اُردو ادب کے قالب میں نئی روح پھونکی اور اردو ادب میں ایک انقلاب برپا کردیا۔ اس نے زبان کو پستی سے نکالا، بیان میں سادگی کی قوت پیدا کی اور سنجیدہ مضامین کا ڈول ڈالا۔‘‘

طرز تحریر کی خصوصیات

سرسید احمد خان کی نثر نگاری کی نمایاں خصوصیات درج ذیل ہیں:

(۲) انفرادیت:

سرسید احمد خان اردو ادب کی وہ منفرد شخصیت ہیں کہ جنہوں نے ہمارے روایتی ادب(جس میں نثر اور شاعری دونوں شامل ہیں) کے خلاف علم بغاوت بلند کیا اور اردو ادب کو مقصدیت سے ہمکنار کیا۔  سرسید کا سب سے بڑا کارنامہ یہ ہے کہ انہوں نے اپنے دور کے نامور ادبیوں کو اس بات پر مجبور کیا کہ وہ ایک ایسا ادب تخلیق کریں جو موجودہ دور کے تقاضوں سے ہم آہنگ ہو چنانچہ سرسید بذات خود ایک “دبستان” ہیں ۔ انہوں نے اور ان کے رفقائے کار کا جن میں حالی ، نذیر، آزاد اور شبلی شامل ہیں۔  اردو کو دنیا کی ترقی یافتہ زبانوں کی صف میں لاکھڑا کیا۔

علامہ شبلی نعمانی اپنے مضمون”سرسیدمرحوم اور اردو لٹریچر ” میں لکھتے ہیں کہ:-

“سرسید کی بدولت آج اردو اس قابل ہوئی کہ اس کو عشق و عاشقی کے دائرے سے نکال کر ملکی، سیاسی، معاشرتی ، اخلاقی اور تاریخی غرض ہر طرح کے مضامین اس خوش اسلوبی ، زو داثر، وسعت ، جامعیت، سادگی اور صفائی سے بیان کرسکتی ہے کہ خود اس کے استاد یعنی فارسی زبان کو یہ بات نصیب نہ ہوئی”۔

(۳) بے ساختگی و بے تکلفی:

مولانا حالی “حیات جاوید” میں لکھتے ہیں:

“سرسید نے جو کچھ لکھا ہے، بے قرارانہ لکھا ہے، بے تانہ لکھا ہے، اور ایسے  ہی ہے جیسے کہ کسی کے گھر میں آگ لگی ہو اور وہ لوگوں کو مدد کے لئے پکاررہا ہو، ایسے میں الفاظ کی ترتیب کا خیال نہیں رکھا جاتا ۔ چونکہ ان کے پاس ایک دعوت تھی اور اس دعوت کے لئے انہیں جو بھی الفاظ ملے، استعمال کردیئے”۔

 سرسید کی تمام تحریریں، بے ساختگی و بے تکلفی کا حسین امتزاج ہے وہ اپنی تحریروں میں لفظوں کی خوبصورتی، فقروں کی ہم آہنگی اور لسانی قواعدکی پابندی کاکوئی خیال نہیں رکھتے، انہوں نے دوسرے لکھنے والوں کو بتایا کہ نثر میں ہر طرح کے مضامین خوش اسلوبی سے بیان کئے جاسکتے ہیں۔

(۴) مقصدیت:

سرسید کا کہنا ہے:

“ایک اچھا ادیب وہی ہے جو کسی مقصد کے تحت لکھے۔”

سرسید کے تمام “مقصدی” ہیں۔ انہوں نے شوقیہ کتاب نہیں لکھی۔ بلکہ ان کی تحریروں کا مقصداصلاح اعمال و اخلاق، اشاعت تعلیم، اور فلاح قوم و مذہب ہے ۔ ادب کے متعلق سرسید کا نظریہ “افادی” ہے۔ اسی وجہ سے حالی نے انہیں ایک “ریفارمر” کہا ہے اور حقیقت میں وہ ایک مجلس اور مذہبی “ریفارمر” تھے۔

حامد افسر کہتے ہیں:-

“اردو میں سرسید کے زمانے سے افادیت اور مقصدیت ادب کے لئے ضروری قرار دی گئی ہے۔”

(۵) سادگی و سلاست:

سرسید خود رقم طراز ہیں:-

“جہاں تک ہم سے ہوسکا مضمون کی ادائیگی کا ایک سیدھا اور صاف طریقہ اختیار کیا، الفاظ کی درستگی اوربول چال کی صفائی پر کوشش کی ہے اور لوگوں کو تلقین بھی کی ہے”

یہ سرسید کی تحریر کی سب سے نمایاں خوبی ہے ۔زبان کی سادگی اور بیان کی سلاست نے انکی تحریروں کو عوام میں مقبول کروانے میں اہم کردار ادا کیا ، جس سے وہ اپنے مشن میں کامیاب ہوئے۔

(۶) تمثیلی انداز:

سرسید احمد خان اردو مضمون نگاری کے بانی سمجھے جاتے ہیں۔ ان یہاں تحریر پر مقصدیت حاوی ہے  ۔ چنانچہ انہوں نے اس مقصدکےحصول کے لئے تمثیلی انداز بھی اختیار کیا ہے۔ سرسید سے پہلے بھی اردو ادب میں یہ انداز تحریر رائج تھا۔     لیکن اس مقصد تفریح و طبع کے سوا اور کچھ نہیں تھا۔ 

ان کے مضمون “امید کی خوشی” سے ایک اقتباس ملاحظہ ہو۔

“او! نورانی چہرے والی یقین کی اکلوتی بیٹی،امید یہ خدائی روشنی تیرے ساتھ ہے۔ تو ہی ہمارے مصیبتوں کے وقت میں ہم کو تسلی دیتی ہے، تو ہی ہمارے آڑے وقتوں میں ہماری مدد کرتی ہے۔”

(۷) اختصار و جامعیت:

اختصار و جامعیت بھی سرسید کے افکار کی ایک نمایاں خوبی ہے۔ و ہ چھوٹے چھوٹے جملوں اور فقروں سے بڑے سے بڑا کام لیتے ہیں۔ انکےمضامین مختصر ہوتے ہیں لیکن اپنے اندر جہانِ معنی پوشیدہ رکھتے ہیں۔ انکے استعمال کردہ الفاظ مختصر ہونے کے باوجود ایٹم بم کی خاصیت رکھتے ہیں۔

بقول مولوی عبد الحق:-

“اثر و دل نشینی کے لئے آسان اور چھوٹے الفاظ ہی کام آتے ہیں۔ بعض اوقات آسان اور چھوٹے الفاظ میں ایٹم بم کی سی قوت ہوتی ہے”۔

 (۸) جدت پسندی:

سرسید کا عقیدہ تھا کہ ادب کو جدید علوم کی روح سے ہم آہنگ ہونا چاہیے۔ سرسید کے افکار کی ایک خصوصیت یہ بھی ہے کہ وہ قدیم کے مقابلے میں جدید اور ماضی کے مقابلے میں عہد حاضر سے زیادہ وابستہ ہیں۔ ان کا ذہن جدت پسند تھا اور اسی جدت پسندی کے زیر اثر انہوں نے عہد حاضر کے مسائل کی طرف زیادہ توجہ دی ہے۔

(۹) استدلالیت:

سرسید کے افکار میں سب سے زیادہ اہمیت “عقل پسندی” کو حاصل ہے۔ وہ اپنی بات کو قاری سے استدلال کی روشنی میں منوانا چاہتے ہیں۔ انکی تحریروں جا بجا مفکرین کی آراء دانشوروں کے مقولے، قرآن و حدیث کے حوالے اور تاریخی شواہد وغیرہ عام ملتے ہیں۔  وہ چاہتے ہیں کہ ان کی بات عقیدت کے بجائے حقیقت سمجھ کر قبول کی جائے۔ ہمارے نصاب میں شامل “رسم و رواج کی پابندی کے نقصانات”اس کی عمدہ مثال ہے۔

بقول ڈاکٹر سید عبد اللہ :

“ان کی تحریرں میں منطقیانہ استدلال پایا جاتا ہےجو ہر قسم کے علمی اور تعلیمی مباحثوں کےلئے موزوں ہے”

(۱۰) انگریزی الفاظ کی پیوند کاری:

سرسید خود رقم طراز ہیں:-

“دوسری زبان کے الفاظ کو اپنی زبان میں بولنا کبھی عبارت کا لطف بڑھانے کے لئے ہوتا ہے ، کبھی زبان کو وسعت دینے کے لئے اگر کسی زبان میں الفاظ کی گنجائش زیادہ نہ ہوتو وہ زبان مردہ کہلاتی ہے۔

اسی احساس نےسرسید کو اپنی تحریروں میں اردو کے ساتھ ساتھ فارسی، عربی اور انگریزی الفاظ بکثرت استعمال کرنے پر آمادہ کیا۔  ان کی تحریروں میں بہت سے انگریزی الفاظ مثلاً لٹریچر، مورل، سویلائزڈ، نیچرل، اسپرٹ، نیشن اور پارلیمنٹ وغیرہ عام ملتے ہیں۔ مثال کے طور پر وہ ایک جگہ لکھتے ہیں۔

“علی گڑھ کے کالج کے اسٹوڈنٹس میں سے ون پرسنٹ بھی نہیں ہے جنہیں ہائی سروسز کے قابل سمجھا جائے۔”

(۱۱) مضمون نگاری اور مقالہ نگاری کی ابتداء:

سرسید کے رسالے “تہذیب الاخلاق” سے فن مضمون نگاری اور مقالہ نگاری کا آغاز ہوا ۔ اس کے علاوہ ایک رسالہ ” علی گڑھ انسٹیٹیوٹ گزٹ” کے نام سے جاری کیا۔ ان رسائل نے اردو صفحات میں انقلاب برپا کردیا اور جدید صحافت کی بنیاد پڑی۔ سرسید کو “جدید  صحافت کا بانی ” اور “جدید اردو نثر کا مورث اعلیٰ” تسلیم کیا جاتا ہے۔ آج جو نثر ہمیں علمی، ادبی، سیاسی ، سماجی ، تہذیبی اور مذہبی دنیا میں نظر آتا ہے ، یہ سرسید ہی کا فیضان ہے۔

(۱۲) تبصرہ کچھ میری اپنی ناقص رائے میں:

مندرجہ بالا خوبیوں کے علاوہ انکی تحریروں میں خلوص و سچائی، طنز و ظرافت اور وسعت جیسی خصوصیات شامل ہیں۔ غرض یہ کہ سرسید اردو زبان کے ان محسنین میں سے ہیں جنہوں نے اردو کو بام عروج پر پہنچایا۔جہاں تک ان کے طرز تحریر کا تعلق ہے  ان کی تحریروں نے نثر نگاری کا ایک نیا باب کھولا۔حقیقت پسندی اور واقعہ نگاری کی بنیاد ان ہی کے مثبت قلم سے پڑی۔ان   کے اس اسلوب کی بناء پر ان کے رفقاء آزاد ،حالی ،نذیر احمداور شبلی اس راہ پر ان کے ساتھ چلے اور عناصرِخمسہ کہلائے۔ اس سارے بیان کا کلامِ حاصل یہ ہے کہ اردو زبان اور مسلم قوم دونوں پر ہی سر سید کے فکری اور قلمی احسا سات ہیں ۔

ڈاکٹر احسن فاروقی نے ان کے بارے میں درست کہا ہے:

“اپنے عمل سے انہوں نے واضح کردیا ہے کہ نثر نگاری کے بنیادی اصول ہونے چاہییں ۔ ان کو اس میں کمال حاصل ہےاور اسی کمال کی وجہ سے وہ اردو نثر نگاری کے سرتاج رہیں گے۔”

٭٭٭

 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s