طرزِِِِ تحریر کی خصوصیات#بابائے اُردو ڈاکٹر مولوی عبد الحق

بابائے اردو  ڈاکٹر مولوی عبد الحق

 (۱) ابتدایئہ

اگر کوئی بیک وقت  محقق،اصلاح ساز،مصنفِ قوائد و لغت ،سوانح نگار،تنقید نگار اور خاکہ نگار ہو سکتا ہے تو وہ صر ف اور صرف مولوی صاحب کی شخصیت ہو سکتی ہے۔سونح نگاری میں ’’ حالی ‘‘ کی اولیت مسلم  ہے  لیکن خاکہ نگاری کے امام  بلا شک و شبہ ڈاکٹر مولوی عبد الحق ہی ہیں۔ آپ نے اردو کی خدمت کو اپنا نصب العین بنا لیا تھا  اور اپنی تمام توانایئاں اس زبان کی ترقی و تر ویج کیلئے وقف کردیں ،اس لئے بابائے اردو کا  خطاب پانے کے مستحق قرار پائے۔ 

 ڈاکٹر مولوی عبد الحق کا شمار اردو کے ان محسنین میں ہوتا ہے۔ جنہوں نے اس زبان کی بے لوث خدمت کی ہے۔ اسے ترقی دی اور اسے دنیا کی ترقی یافتہ زبانوں کی صف میں لاکھڑا کیا۔ ان کے اردو زبان و ادب پر ان گنت احسانات ہیں اور ہر زمانے میں ہر صاحب طرز ادیب ان کے  احسانات کے بوجھ کو اپنے کندھوںپر محسوس کرتا رہے گا۔آپ دبستانِ ’’سر سید ‘‘کے مہکتے پھول ہیں  ۔اسی لئے آپ کا طرزِ نگارش بھی مقصدیت  ، اصلاح اور خلوص کی چاشنی سے مالا مال ہے۔ اسی لئے آپ  کا طرزِ نگارش سہل پسندی کی مثال بن گیا۔

بقول معروف تنقید نگار  عبدالماجد دریا آبادی

“مولوی عبد الحق کی خدمات کا شمار کرنا دشوار کام ہے ، ویسے تو ایک عرصے سے اردو کے محسنوں نے اردو کی خدمات

انجام دی ہیں لیکن اگر کسی ایک کو محسنِ اعظم کا لقب دیا جاسکتا ہے تووہ مولوی صاحب کی ذات ہے۔

(۲) تحقیقی و تنقیدی انداز:

مولوی عبد الحق کا سب سے بڑا کارنامہ یہ ہے کہ انہوں نے اردو کے قدیم شعراء اور نثر نگاروں کی تخلیقات پر بڑے معرکۃ الاراء مقدمات لکھے۔ یہ اپنی طرز کا واحد کام تھا جو مولوی صاحب کی ذات سے شروع ہوا۔ انہی پر آکر اختتام پذیر ہوگیا۔ یعنی وہ اسفن کے موجد بھی تھےخاتم بھی۔ انہوں نے شاعروں اور نثر نگاروں کے بارے میں جو رائے دی ہیں۔ وہ آج بھی حرف آخر کا درجہ رکھتی ہیں اور کوئی بھی ان میں کسی قسم کی کوئی کمی بیشی نہیں کرسکتا۔ میر تقی میر اور میر امن کے قصے “چہار درویش” کے بارے میں ان کی رائے ذیل میں درج کی جاتی ہے۔

“میر تقی میر فی الحققیت  سر تاج الشعرائےاردو ہیں۔ اردو زبان میں انکا کلام اسی ذوق و شوق سے پڑھا

جائے گا جیسے شیخ سعدی کا کلام فارسی زبان میں۔ اگر دنیا کے چند ایسے شعراء کا کلام منتخب کیا جائے

جن کا نام ہمیشہ زندہ رہے گا تو میر تقی میر کا نام اس فہرست میں ضرور شامل ہوگا”۔

(انتخاب کلام میر: مقدمہ شعر و شاعری)

“میر امن کا قصہ” ، “چہار درویش” فی الحقیقت باغ و بہار ہے یہ اردو کی ان چند کتابوں میں سے ہے جو ہمیشہ

زندہ رہنے والی ہے اور شوق سے پڑھی جائے گی۔”

ڈاکٹر فرمان فتح پوری کہتے ہیں:

“ڈاکٹر مولوی عبد الحق صاحب کو اردو مقدمہ نگاری ایک خاص ڈھب ہے اور اب یہی ڈھب مقدمہ نگاری

معیار کہلاتا ہے۔”

(۳) خاکہ نگاری:

مولوی عبد الحق ایک عظیم خاکہ نگار تھے۔ اس سلسلے میں انکی ایک اہم تصنیف “چند ہم عصر” ہے یہ کتاب اردو ادب میں ایک شاہکار کا درجہ رکھتی ہے۔ ان کے خاکے اسلوب بیان کی پختگی ، زبان کی صحت، روانی ، شگفتگی اور جامعیت میں اپنی مثال آپ ہیں۔ انکی اس تصنیف سے چند اقتباسات ملاحظہ ہوں۔

“سچائی اور ایمانداری کسی کی میراث نہیں، یہ خوبیاں نیچی ذات والوں میں بھی ویسے ہی پائی جاتی ہیں۔ جیسے کہ اونچی ذات والوںمیں اور انسان کا بہترین مطالعہ انسان ہے اور انسان ہونے میں امیر و غریب کا کوئی فرق نہیں۔” (گدڑ ی کا لعل، نور خان)

“دنیا نیکوں ہی کے لئے نہیں ، اس میں بدوں کا بھی حصہ ہے اور شاید دنیا کی  بہت کچھ رونق انہیں کے دم سے ہے۔

وہ دونوں سے کام لیتے تھے۔” (تذکرہ محسن، چند ہم عصر)

نثار احمد خان ان کی اس تصنیف کے بارے میں کہتے ہیں:

” چند خاکوں کا یہ مجموعہ اسی ذوق و شوق سے پڑھا جائے گاجب تک “غالب کے خطوط” اور ابو الکلام آزاد کی

“غبار خاطر” کا سکہ دلوں میں بیٹھا رہے گا”

(۴) عکسِ حالی:

بقول عبد الماجد دریا آبادی:

“مولوی صاحب سادہ نویس اور سنجیدہ نویس ہیں گویا حالی کے مثنیٰ”

مولوی عبد الحق “دبستانِ سرسید” میں سب سے زیادہ حالی سے متاثر ہیں۔ انہوں نے جس ادبی فضا میں آنکھ کھولی ۔ اس وقت ہندوستان کے آسمان ادب پر اردو کے عناصر خمسہ سرسید، آزاد، نذیر احمد ، شبلی  اور حالی ضوفشانی کررہے تھے اور یہ سب اپنی اپنی جگہ ایک تاریخ رقم کررہے تھے لیکن مولوی صاحب کا جھکاؤ حالی کی طرف ہوا بلکہ یوں کہنا چاہیے کہ انہوں نے اپنی ذات میں حالی کو جذب کرلیا تھا۔  چنانچہ “مکتوب حالی” پر تبصرہ کرتے ہوئے وہ خود کہتے ہیں:

“مولانا حالی اُن پاک نفوس میں سے ہیں جن کا ہم ادب کرتے ہیں اور ان سے محبت بھی”

(۵) رنگِ سرسید:

بقول ڈاکٹر سید عبد اللہ:

“یہی و ہ شخص ہے جسکے کردار اور ذہنی ساخت کی تشکیل میں سرسید کے قول و فعل نے سب سے زیادہ حصہ لیا ہے۔”

مولوی عبد الحق سرسید کے افکار سے بھی متاثر تھے اور انہوں نے ان کے اثرات کو شعوری طور پر محسوس بھی کیا ۔ یہی وجہ ہے کہ ان کے اسلوب بیان میں سرسید کے رنگ تحریر کا حسین امتزاج نظر آتا ہے۔ انہوں نے سرسید کے اسلوب کی سب سے زیادہ پیروی کی۔ اور ان میں سب سے زیادہ کامیاب بھی نظر آئے ہیں۔

(۶) اردو زبان سے عشق:

مولوی صاحب کا اوڑنا بچھونا اردو ہی تھا ۔ انہوں نے ایک طویل عرصے تک اس زبان کی خدمت کی اور اسے بنایا اور سنوارا۔ بلاشبہ وہ اردو زبان کے ایک بہت بڑے عاشق تھے ۔ ان کے کارناموں میں انجمن ترقی اردو کے قیام کے علاوہ جامع عثمانیہ کی تاسیس جس کے ذریعے اردو کے دامن کو وسیع کرنا اور قدیم و جدید علوم و فنون کے خزانوں سے اس زبان کو مالا مال  کرنا شامل ہے۔ کراچی میں اردو کالج (موجود اردو یونیورسٹی) کا قیام بھی انہی کی کاوشوں کا نتیجہ ہے۔

پروفیسر رشید احمد صدیقی کہتے ہیں:

“مولوی عبد الحق نے اردو ادب کی ترقی میں اپنا جیون برت رکھا۔”

(۷) خلوص و سچائی:

مولوی عبد الحق بنیادی طور پر سرسید و حالی سے متاثر تھے۔ لہذا ان کی تحریروں پر بھی انکا پر تو نظر آتا ہے۔ چنانچہ مولوی صاحب کی تحریریں جہاں ادب عالیہ میں شامل سمجھی جاتی ہیں تو اسکی وجہ بھی صرف یہی ہے کہ انکا ہر لفظ خلوص و سچائی سے بھرپور ہے یعنی دل سے بات نکلتی ہے اور دل پر اثر کرتی ہے۔ انکی تحریریں جہاں خلوص و سچائی سے بھرپور ہیں۔ وہاں ان میں سادگی کا عنصر نمایاں ہے ۔ وہ بقول خود اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ:

“صرف سادگی میں ایک ایسا حسن ہے جسے کسی حال اور کسی زمانے میں زوال نہیں بشر طے کہ اس میں صداقت ہو”

(۸) استدلالیت (مدلل اندازِ تحریر):

حالی اور سرسید کی طرح مولوی عبد الحق کے افکار میں بھی سب سے زیادہ اہمیت “عقل پسندی” کو حاصل ہے۔ وہ استدلال کی روشنی میں بال کی کھال نکالنے کا فن خوب جانتے ہیں۔ ان کے استدلال کے آگے ان کے مخالفین بھی بے بس نظر آتےہیں۔ ان کی تحریریں منطقی اعتبار سے مربوط و مضبوط ہیں۔

“ان کی تحریریں پڑھ کر ان کی فنی مہارت کا قائل ہونا پڑتا ہےاور یوں لگتا ہے جیسے کسی وکیل کا دعویٰ اور جواب دعویٰ تیار کیا گیا ہے۔”

(۹) مقصدیت:

مولوی عبد الحق کی تحریروں کا مقصد اردو زبان کے دامن کو وسعت دینا اور اسے دنیا کی ترقی یافتہ زبانوں کی صف لاکھڑا کرنا شامل ہے۔ حالی اور سرسید نے جس مقصد کا بیڑا اٹھایا ۔ مولوی عبد الحق نے اسے تکمیل تک پہنچایا۔

بقول آلِ احمد سرور:

“سرسید نے جس اسلوب کی ابتداء کی اور حالی نے جسے پروان چڑھایا مولوی عبد الحق نے اس اسلوب کو اپنی معراج تک پہنچادیا”

(۱۰) خطبہ نگاری:

ڈاکٹر رفیع الدین ہاشمی خطباتِ عبدالحق سے متعلق  رقمطراز ہیں کہ:

’’ ان خطبات کی سب سے بڑی خوبی یہ ہے کہ وہ قاری کو مسحور کر دیتے ہیں ۔ ان میں ایک عالمانہ شان ،ہمہ گیری اور تنوع ہے ۔‘‘

’’خطباتِ عبدالحق ‘‘ آپ کو ایک صاحبِ طرز ادیب  و نثر نگار بنانے میں دیگر تصانیف کے مقابلے میں بہت اہم ہیں ۔ یہ خطبات سادگی و سلاست  اور صداقت و اثر انگیزی میں بے مثال ہیں ۔یہ خطبات پوری صدی کی اجتماعی زندگی کی مکمل دستاویز ہیں ۔کوئی بھی تاریخ نویس ان خطبات کے مطالعے کے بعد اس دور کی تاریخ رقم کر سکتا ہے۔

(۱۱) تصانیف:

قوعدِ اردو                                                                  ۔۔۔۔۔ لسانیات

اردو انگلش ڈکشنری                                                 ۔۔۔۔ لسانیات

سر سید حالات و افکار                                                ۔۔۔۔ تحقیق و تا ریخ

نصرتی                                                                 ۔۔۔ تحقیقی مقالہ

مرہٹی زبان پر فارسی کا اثر                                        ۔۔۔۔۔۔ تحقیقی مقالہ

اردو کی نشو و نما میں صوفیائے کرام کا حصہ                   ۔۔۔۔تحقیقی مقالہ

خطباتِ عبد الحق                                                 ۔۔۔۔۔لیچرز کا مجموعہ

مقدماتِ عبد الحق                                              ۔۔۔۔۔ مضامین

تنقیداتِ عبد الحق                                             ۔۔۔۔ تنقیدی مضامین

(۱۲) مقدمہ نگاری:

آپ نے بے شمار کتب پر سیرِ بحث ا ور معلوماتی مقدمے تحریر فرمائے ہیں۔ اردو ادب میں ان مقدمات کا مرتبہ بہت بلند ہے ۔ان میں سیرت نگاری اور سوانح نگاری کا فن عروج پر نظر آتا ہے۔ ان مقدمات کے باب میں بلند پایہ محقق ڈاکٹر عبادت بریلوی کی رائے سے استفادہ کرتے ہیں۔

’’ سب سے بڑی بات یہ ہے کہ ان مقدمات میں جو انداز اور اسلوب اختیار کیا گیا ہے وہ حد درجہ شگفتہ اور شاداب ہے  یہی وجہ ہے کہ یہ مقدمات دماغ ہی کو متاثر نہیں کرتے ،دل پر بھی ان کا اثر ہوتا ہے۔

(۱۳) ناقدین کی آراء  :

پروفیسر حمید اللہ خان کچھ یوں رقمطراز   ہیں کہ:

“مستقبل کا مورخ جب بیسیویں صدی کے نصف اول میں اردو کے لسانیاتی اور تنقیدی سرمائے کا جائزہ لے گا

تو اسے مولوی عبد الحق کے عظیم الشان کارناموں کی صحیح عظمت کا اندازہ ہوسکےگا”۔

ڈاکٹر ابو للیث صدیقی کچھ یو ں گویا  ہیں کہ  :

’’ دورِ جدید میں اردو کی تاریخ  و تنقید کا جو عام  مذاق  تعلیم یافتہ طبقے میں پیدا   ہوا ہے  اور اردو کی جو  علمی سطح  قائم ہوئی ہے اس میں مولوی عبد الحق  کا  بڑا  ہاتھ ہے۔‘‘

بقول ڈاکٹر انور سدید :

’’مولوی عبدالحق نے  ’’ چند ہمعصر ‘‘ میں عظمتِ کردار کو اہمیت دی اور سر سید ، حالی ، اقبال ، اور محسن الملک  جیسی بڑی شخصیات کے ساتھ نور خان اور نام دیو مالی جیسے کرداروں کو بھی محبت کی نظر سے دیکھا۔ چنانچہ انہیں اس  صنف میں ایک  سنگِ میل کی حیثیت دی گئی۔‘‘

(۱۴) تبصرہ کچھ میری اپنی ناقص رائے میں:

مولوی عبد الحق کی تحریریں  جدید اور قدیم اسلوب ِ نگارش کا حسین سنگم ہیں ۔ انکی تحریریں دبستان ِ سرسید کی تحریروں کا عکس  ہیں ۔ انکی تحقیق و  تنقید کی بدولت اردو نظم اور نثر میں ایسی معلومات منظر عام پر آئیں۔ جن سے لوگ پہلے واقف نہیں تھے۔ بلاشبہ وہ اردو کے ایک بہت بڑے عاشق تھے۔ اور انکی تمام عمر گیسوئے اردو کو سنوارنے میں  صرف ہوئی۔آپ کی خدمات نا قابلِ فراموش ہیں ۔ قدیم نسخے ،تذکرے ،شعراء کے مجموعے  اور کلیات، قدیم نثری داستانوں کی بازیافت اور اس کی ترتیب و اشاعت آپ ہی کا خاصہ ہے ۔گویا آپ نے بعد کے آنے والے مؤرخین اور محققین کیلئے ہزاروں زاویے سے نئی راہیں کھول دیں ہیں ۔اردو ا زبان آپ پر جتنا بھی ناز کرے کم ہے۔

مولانا غلام رسول مہر نے انکے بارے میں درست کہا ہے:

“مولوی عبد الحق کی خدمات اس درجہ بلند، گراں مایہ اور پائیدار ہیں کہ آج

پاک و ہند کے آسمان کے نیچے کوئی دوسرا شخص علم و ادب اور زبان کے دائرے

میں ان کی ہمسری کا دعویٰ نہیں کرسکتا۔”

⚝⚝⚝

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s