غزل # اے دل تو مجھے لے چل (گانا)

بکھرے   خیال  تو  میرے   دل  سے   نکلتا   نہیں

یادوں  کا  سلسلہ  کسی   پہر   ڈھلتا  نہیں

اے  دل تو  مجھے  لے  چل  ان  کی  بانہوں  میں

 قرار مجھ  کو اب ایک پل  بھی  آتا  نہیں

وجود  بس  گیا  ہے  اُ ن  کا   خیالوں  میں  میرے

اُ ن کے  بِغیرایک  پل  بھی  رہا  جاتا نہیں

فضا  اُ ن  کے  قریب  ہونے  کا  پتا  دے  رہی  ہے

مہک ہے ایسی  کہ ہم  سے رُکا جاتا  نہیں

کیا ہوا   جو آپ نے ہاتھ رکھ  دیا میری آنکھوں پر

 چہرہ  آپ  کا  آنکھوں  کی تاب  لاتا  نہیں

جسم  کی مہک  نے  دل  کو قرار دے  دیا  ہے اتنا

کہ  آپ  کے  بغیر  کہیں  تسکین  پاتا  نہیں

آہی گئے  ہو دل کی دنیا  میں زندگی میں بھی آجاؤ

محبت کے درد کا  سُرور دل سے جاتا نہیں

زمانے کی گردش نے  ڈھائے ہیں ظلم و ستم اتنے

سکندر ؔ  کے دل سے خیال ان کا جاتا نہیں

سکندرؔ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s