غزل# جب حدیثِ یار کے جذبات اُبھر نے لگتے ہیں

جب  حدیثِ  یار  کے  جذبات  اُبھرنے  لگتے  ہیں

غیب  سے مضامین  خیال  میں  اترنے  لگتے ہیں

بڑی  سرعت  سے  چلتاہے   پھر  مصور   کا  قلم

قرطاس پر   الفاظ  کے موتی   بکھرنے لگتے ہیں

ان  کے  گیسو جو  کھل  کر شانوں  پہ  کیا  آئے؟

ارمان دل  میں   کے قربت  کے  مچلنے لگتے ہیں

ان کے رُخِ روشن میں  کچھ  چمک  ہی ایسی  ہے

دیوانے  سب ان  کو  پانے  کی  لگن  رکھتے  ہیں

جب   وہ  اِٹھلا   کے   یوں   قریب   سے   گزرے

توپسینےعاشق کے ماتھے سے،ٹپکنے لگتے ہیں

یہ  ترچھی  نظریں !  ناوک  ہیں  بہت  ،  ظالم  کی

دِلاوَر  فِگار  ہیں ، زخم  دل   پہ  گہرے لگتے  ہیں

وہ  سج  دھج  کے  بزم  میں  یو ں  آئے   جیسے

سکندرؔ  بسمل  سے   مراسم   پُرانے   لگتے  ہیں

سکندرؔ

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s