غزل#دلوں میں خوشیوں کے چراغ ضرور جلتے ہیں

دلوں میں  خوشیوں کے چراغ  ضرور جلتے ہیں

بچھڑنے  والے  کہیں  نہ  کہیں  ضرور ملتے ہیں

مت   گھبرا !  اے    میرے    اجڑے    ہوئے   دل

طوفانِ  غم  بھی   قسمت  والوں  کو ہی ملتے ہیں

اے  خزاں ! تیرے  آنے  سے  میرا چمن  اجڑ  گیا

بد نصیب  کہاں پیار کے  بندھن  میں  بندھتے  ہیں

عاشق کو دیکھ کر سماج  کے ٹھیکیداروں نے کہا

ناداں ! دو دل  بھی  زمانے  میں  کہیں  ملتے  ہیں

حق کی تلاش میں نکل جاؤ  مشکلات کو نہ دیکھو

حق  پرست  زمانے  میں  مشکل  سے  ملتے  ہیں

اسی امید  پر  ہم  نے  جلائے ہیں محبت  کے چراغ

کہ ان کے دل میں بھی  پیار کے جذبات مچلتے ہیں

سکندرؔ  خستہ  حال ! دل کی  بات  بتائے  کیسے ؟

وہ  با  حیا  ہیں ، خلوت  میں  کب کہیں  ملتے  ہیں

سکندرؔ

Advertisements

One thought on “غزل#دلوں میں خوشیوں کے چراغ ضرور جلتے ہیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s