نغمہ ( اپنی دھرتی سے پیار)

یہ  دھرتی  ہماری  دھرتی  ہے

انسانیت سب اس میں بستی ہے

یہاں  دریا بہتےہیں ، ٹھاٹھیں مارتا   ہے سمُندَر

زر و سیم ، ہیرے  جواہرات    ہیں اس کے اندر

چھپے  ہیں   بے  شمار  خزانے  اس  کے  اندر

قدرت  کے بیش  بہا خزانوں کی لوٹ  مچتی ہے

ہر کس کی بگڑی قسمت بھی خوب سنورتی ہے

یہاں دشت و بیاباں , جبل و صحراء اور گھنے گھنے  ہیں جنگل

دن  بھر ہرن بھرتے ہیں  چوکڑیاں اور درندے مچاتے ہیں  دنگل

مرغانِ     چمن    منا    رہے     ہیں    جنگل    میں    منگل

یہاں  انسانیت   شیطانیت  سے  ڈرتی  ہے

یہاں ظلم کی  چکی  بھی  خوب  چلتی  ہے

یہاں   اونچے    پربت   گردوں    سے   کرے   باتیں

لہلہاتے  کھیتوں  سے  خوب  ہوا  بھی  کرے   باتیں

فضاؤ ں میں گونجے حق  سرہ ُ کی مدھر   صلوٰ تیں

چمن میں  چپے چپے پہ عشق کی محفل سجتی ہے

کالے  کالے  بھنوروں   کی  قسمت   سنورتی   ہے

 یہ  دھرتی  ہماری  دھرتی   ہے

انسانیت  سب اس میں بستی ہے

سکندرؔ

Advertisements

One thought on “نغمہ ( اپنی دھرتی سے پیار)

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s