نعتِ رسولِ مقبول ﷺ

دل میں  ایک  حسرت  ہے  کہ  مدینہ  جاؤں ،پھر واپس  نہ آؤں

عمر  گزرے   آقا  کی خدمت  میں ، پھر جنت  البقیع  مدفن بناؤں

دین  کی  خاظر  ! آقا   نے  طائف  کی  گلیوں  میں  پتھر  کھائے

جہاں   جہاں  آقا   کے  نعلین  پڑے   ،  ہونٹ   میں اپنے   لگاؤں

زندگی  ساتھ  گزاری ،  بڑوں  میں  سب   سے  پہلے  ایمان  لائے

یارِ غار  نے  صدیق  کا خطاب  پایا ، ایسی قسمت  پہ واری  جاؤں

گنبد ِخضرا کا سایا ! کبھی  کسی  نے  دیکھا ہے ، نہ  دیکھے گا

نور سے پُر ہے میرے آقا  کا  روضا ، اس  کے میں  قربان جاؤں

آقا کی پیدائش پر ابو لہب نے  جب   اپنی لونڈی   ثویبہ کو آزاد کیا

ہے ابو لہب کا بیاں کہ دوزخ میں ،آقا کی رَحمت سے سُکوں پاؤں

شعبِ ابی طالب  میں آپ ﷺ  کا صحا بہ کے ساتھ دو سال قیام

آقا کی صحبت میں تربیت کی ایسی مثال کہاں سے ڈھونڈ کے لاؤں

یہ ادنیٰ سے کلمات آقا کی مدح میں سکندرؔ کے دہن سے ٹپکے ہیں

کاش !مقدر  چمک جائے  اور میں  بھی آقا  کا  ثناء خواں بن جاؤں

سکندرؔ

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s