عید کے موقع پر غزل کا تحفہ

عید ِ سعید  ! خوشیوں کا تحفہ  لائی ہے

بچھڑے،ٹوٹے دلوں کو ملانے آئی  ہے

اس دن سب لوگوں کا رہ جاتا   ہے بھرم

الجھن سب کےدل کی سلجھانے آئی ہے

جوروزگارکی خاطر!وطن سے دور تھے

ان کو بھی  گھروں  میں کھینچ  لائی ہے

گھر گھر  پکتے  ہیں ،  پکوان   انوکھے

گھر  گھر   دعوت   کا   پیغام  لائی   ہے

بہت دنوں سے جو نفرتیں دلوں میں پالے بیٹھے تھے

کدورتیں  سب  دلوں  کی  پل بھر میں  مٹانے آئی  ہے

ہر جگہ  خرید و فروخت  کا  بازار گرم ہے

کارو بار سب کے  خوب  چمکانے آئی  ہے  

کہیں  بچہ کوئی جوتے کیلئے اڑا  کھڑا ہے

تمنا  ! اس بچے کی  پوری کروانے آئی ہے  

عام دنوں میں بچے جو لے نہیں پاتے اپنی مرضی سے

 عید نے ان کی ابو سے  ،ہر خواہش پوری کر وائی ہے

نو جوانوں   نے  بھی  عجب  ڈھنگ سے ڈالے بھنگڑے

عید     بھڑاس  ان کے دلوں کی آج ! نکلوانے  آئی  ہے

بیوٹی  پارلروں  اور ہیئر ڈریسروں کا  چمکا  ہے  دھندہ

عید  نے  ، ان  کی  بھی  خوب  !  ڈبل عید  کروائی  ہے

دیکھو ! اپنی خوشیوں میں  اُن کو نہ بھولو

عید  سے  پہلے ، جن  پر  مصیبت  آئی  ہے   

اُمت   میں  خوشیوں   کا   طوفان  دیکھ   کر

سکندرؔ   بھی اس  عید  پر خوب  عیدائی ہے

سکندرؔ

One thought on “عید کے موقع پر غزل کا تحفہ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s