نغمہ ارتھ ڈے کے موقع پر

یہ   زمیں    ہماری    زمیں    ہے   اِسے   خود مت  اُجاڑو
کِھلا   کر   پھول  امن    و   مَحبت کا   اِ س چمن کو سجالو
دنیا    میں   بسنے   والے     مطلب   کے     پُجاری     ہیں
دل اِن  کے  کالے   ہیں  ،   یہ   احساس    سے  عاری   ہیں
ان    کو   اَخلاق     و   عمل   کا     درس    دے   کر   بچالو
کِھلا   کر  پھول   امن    و  مَحبت    کا  اِ س  چمن کو  سجالو
یہ    بڑی     بڑی     صنعتیں      خوشحالی    لا    رہی    ہیں
مگر   اے   ناداں  !   یہ     کہ    آلودگی    پھیلا    رہی    ہیں
خِرَد     مندی      کا     جامہ    پہن   کر   آبی   ذخائر   بچالو
کِھلا    کر   پھول   امن    و مَحبت   کا   اِ س   چمن کو سجالو
ستمگر سِتم کرتے رہیں گے ،جنگل کے جنگل کٹتے رہیں
گے
ہماری  خاموشی  پر ،  دریا ؤ ں   کے   رُخ  مُڑتے  رہیں  گے
اِن  کو جِہل کے پنجے سے  چھڑا کر علم کی روشنی میں  ڈالو
کِھلا   کر   پھول   امن    و   مَحبت کا  اِ س   چمن  کو   سجالو
ہمارے    ملک    کا    جو   اک    اک   درخت    کٹ    رہا   ہے
زرخیز     و    ہریالی    کا      دور     بھی    سِمَٹ    رہا    ہے
دریاؤں  پر  ڈیم  بنا  کر  اس  زمین  کو  بنجر  ہونے سے بچالو
کِھلا   کر   پھول    امن    و   مَحبت  کا   اِ س  چمن  کو  سجالو

سکندرؔ

One thought on “نغمہ ارتھ ڈے کے موقع پر

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s