پہروں ڈوبا رہتا ہوں ان کے خیالوں میں

پہروں    ڈوبا    رہتا     ہوں    اُن    کے    خیالوں     میں

جذبات   کو, ان   کے   وُجود   نے ایسا   خُمار   دیا    ہے

اُٹھتے بیٹھتے ، چلتے پھرتے   کھِڑکی  پر رہتی  ہے  نظر

 اُن  کی  دید  کی اس  تڑپ  نے   تو ، مجھے     مار دیا ہے

یہ عز ،  یہ غرور ، یہ  ناز ، یہ  ادا ، یہ بانکپن،  یہ  خُمار

قدرت     نے   چاند   میرے  آنگن    میں   اُتار    دیا  ہے

وہ  گیسو  کھولے   ناوک   نظروں    سے یوں  تکتے ہیں

جیسے  کسی  اپسرا  کو  رب  نے ! زمین  پر اتار  دیا ہے

بے  قراری  دل  کی   بڑھتی  جاتی  ہے ،  گھٹتی  ہی  نہیں

نشتر  ہے   مہلک  جو  کسی  نے گہرا  دل  میں اُتار دیا ہے

غم  سے  دل  کو  بہلانے  دو ، خوشی  کوئی  راس آتی نہیں

مَحَبت کا محل ! اپنے  زور سے ظالم نے  مِسمار کر دیا ہے

سکندر ؔ !  یہ  دل کا گھاؤ تم  زمانے  کو   دکھاؤ گے کیسے ؟

کہ  اُس    ماہِ   جبیں  نے  تمہیں  اپنے دل سے اتار دیا ہے

سکندرؔ

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s