آج پھر لبوں کو سی لیا میں نے

آج   پھر  !   لبوں    کو   سی   لیا    میں    نے

غم   !    سینے    میں    چُھپا    لیا     میں   نے

بادلو   !    برس     جاؤ     میرے     آنگن    میں

چنگاری   کو   سینے   میں   دبا    لیا   میں    نے

ظلم  حد   سے  بڑھتا  ہے  ناحق  آدمی مرتا  ہے

نقش   انصاف    کا    لوگو !   مٹا  دیا   میں   نے

ہر    جرم     کی     سزا    ملے   گی   مجھ    کو

جبر   کے   آگے   سر  کو   جُھکا   لیا   میں   نے

سکندر !یہ شہر  اب شہرِ  خموشاں ہی نہ بن جائے

اپنے ہاتھوں سے شبستاں کو مدفن بنا لیا میں نے

سکندرؔ

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s